ذرا یاد کر

ذرا یاد کر میرے ہم نفس

میرا دِل جو تم پہ نثار تھا
وہ ڈرا ڈرا سا جو پیار تھا
تیرے شوخ قدموں کی دھول تھی
تیرے قافلے کا غبار تھا

Zara Yaad Kar

ذرا یا د کر 
ذرا یاد کر 
ذرا یاد کر 

وہ گُھٹی گُھٹی سی نوائے دِل
میری آہِ درد کا ساز تھی
جو پڑھی تھی اشکوں نے ٹوٹ کہ
کِسی بے خُدا کی نماز تھی
جسےِ رو دیا ہے ذر ا ذرا
میری بے بسی کا فشار تھا
ذرا یاد کر میرے ہم نفس

ذرا یاد کر 
ذرا یاد کر 

میرا غم تو ہے غمِ مبتلا
میں جیا مگر میں جیا نہیں
تیرا غم ہے تیری ندامتیں
تُو جیا مگر تُو مرا نہیں
تجھے عُمر بھر کی سزا مِلی
تیرا جُرم جُرم فرار تھا
ذرا یاد کر 
ذرا یاد کر 
میرے ہم نفس

خلیل الرحمن قمر