لذیذ کھانے کی گھٹن

thumb_600

قرآن اکیڈمی میں گزشتہ رمضان رات پونے ایک بجے تراویح پڑھائی جا چکیں تو ترجمہ و تشریح کے دوران خواتین کے پنڈال سے ایک معزز
خاتون نے محقق العصر مفسر قرآن ڈاکٹر طاہر خاکوانی صاحب کو ایک چٹ بھجوائی جس میں یہ سوال کیا گیا تھا کہ اگر ہم کسی احمدی قادیانی کے گھر سے کھا پی لیں تو کیا کریں؟

ڈاکٹر صاحب نے سپیکر میں نہایت  ہی  مختصر  اور  جامع  جواب  دیا  جسے  سن  کر  تمام  مرد  کھلکھلا  اٹھے  ان  سب  میں  میرا  قہقہ  زیادہ  بلند تھا  جواب  ہی  ایسا  مناسب  تھا  کہ ، تم  احمدی  قادیانی  کے  گھر  جاتے  ہی  کیوں ہو؟۔  بات  آئی  گئی  ہو  گئی  مگر  آج  پانچ  ماہ  بعد  اس  ایک  قہقہے  نے  مجھے  مسلسل  تین  گھنٹے  بھری  گاڑی  میں  رلایا۔ یقیناََ  وہ معزز  خاتون  ہمارے  ہنسنے  پر پریشان  اور دل آزار  ضرور ہوگی۔  جس  کا نتیجہ  میرے آگے  آیا۔  واقعہ  یہ  پیش آیا  کہ  27 جنوری2012  کو ہماری  یونیورسٹی  میں ایم  اے کے  امتحانات بشمول  لیہ  اور  ڈیرہ غازی خان ہو رہے تھے۔ جہاں  کنٹرولر امتحانات کے ذمہ دار آدمی  کا بروقت  وہاں پہنچنا  بڑا ضروری تھا جس  کے  لئے  میرا انتخاب  ٹھہرا۔ چونکہ  دو مرکزوں میں ایک  ہی  تاریخ  کو  امتحان  تھا  اس لئے  مغرب  کے بعد  یہ  خیال  آیا  کہ رات  ڈیرہ غازی خان پہنچ قیام کیا جائے مگر کس کے ہاں۔  آخر ایک  پرانی  ڈائری کی  ورق  گردانی  کے دوران ایک پرانے جاننے والے کا فون نمبر  مل گیا میں نے اپنے بیٹے عبداللہ قیوم کو کہا تو  اس نے فوراََ فون ملا کر دیا۔  میں نے اپنے ملنے والے  کو  بتایا  کہ امتحانی  سلسلے  میں رات  آپ  کے ہاں ٹھرنے کے لئے ابھی ملتان سے روانہ ہو  رہا ہوں کیونکہ  ایم اے  کے سوالیہ پرچے ہاتھ میں اٹھائےکسی  ہوٹل  میں ٹھرنا  میں بالکل  پسند  ںہیں  کرتا یوں  کہیئے میں ڈرتا ہوں۔  خیروہ صاحب  اپنے گھر میری آمد کا  سن  کر بے حد خوش ہوئے۔ میں ابھی  مظفر گڑھ بھی نہ پہنچا تھا کہ  اس میزبان  کا  فون آگیا۔ اس نے پوچھا۔ کہ  میں اس  وقت کہاں پہنچا ہوں پھر بار بار وہ فون پر یہی پوچھتا رہا اور کہتا رہا کہ جیسے ہی میں ڈیرہ غازی خان کی حدود میں داخل ہوجاؤں تو  انہیں  موبائل فون پر  اطلاع کر  دوں۔ میں پہنچ  کر  وین سے  اترا  ہی تھا کہ میرا میزبان اپنی  سواری سمیت میرے  سامنے تھا وہ فوراََ مجھے اپنی کوٹھی پر لے گیا اور ایک نہایت عمدہ کمرے میں ٹھہرایا جس میں رکھی ایک مڑی میز کو مجھ سے پہلے  ہی  میری  میزبانی  کے  لئے  خوب  بھر دیا گیا تھا۔ وہ میرے  ہاتھ منہ دھلوانے  کے لئے  گرم  پانی  کراکر لایا تو میں دیواروں پر نظر جمائے کھڑا تھا سامنے دیوار کے دائیں طرف اور بائیں طرف یا محمدﷺ کے  فریم پر جا ٹھہریں میرا دل بھر آیا اور مجھےآنکھوں میں نمی سی محسوس ہوئی یہ خاص میری ہی کیفیت نہیں تھی فطرتاََ ہر محمد کا نام آتے ہی انس و محبت کے آنسواپنی آنکھوں میں پاتا ہوں بعض تو باآواز رو دیتے ہیں۔ میرے میزبان نے اندر  سے چائے لا کر میز پر رکھتے ہوئے سنجیدگی سے مجھے دیکھااور پر تکلف  کھانے  کی طرف میری  توجہ مبذول  کرائی۔  میں نے پہلے  عشاء کی نماز کا اظہار کیا تو وہ فوراََ اندر گیا اور جلد ہی میرے سامنےمصلی لا کر  بچھا دیا۔ نماز کے بعد  کھانا کھا یا گیا جو بے حد لذیذ  اور فرحت بخش تھا وہ خالی برتن اندر لے گیا تو میرے ہاتھ دھلوانے  کے لئے تولیہ اور گرم پانی  لے کر آیا پھر جب وہ میرے لئے نہایت قیمتی کمبل  اور مزید ایک نیا تکیہ لیے آیا تو میں نے سورہ ملک کے لیے قرآن یا 29واں سپارہ طلب کیا وہ جلد ہی ایک سادہ قرآن شریف لے آیا پھر ایک ترجمے  والا قرآن لے کر آیا جسے میں نے  واپس  کردیا  جس  کا  افسوس  مجے  اب  بھی  ہے کہ  کھول  کر میں  اسے  دیکھتا  تو  سہی  کہ وہ  کیسا  ترجمہ  تھا۔ تفسیر  کس  کی  تھی۔  سورہ ملک  کا معمول  بھی  اللہ  ہی  کے  حکم  سے  ادا  کیا  اور  نہایت  اعلٰی گاؤ تکیوں اور گدوں والے قیمتی  بیڈ  میں دھنس  کر سو ریا۔ تہجد کے  وقت  وہ  میزبان  جس  کی ہدایت  کے لیے  میں اپنے اللہ سے دلی دعا گو ہوں  گرم پانی  کا دیگچہ اٹھائے   میرے کمرہ  میں آیا اور بولا سوئی گیس ابھی بھی کم آ رہی ہے۔ میں  آپ  کی ضروریات  کے لئےگرم پانی  کراکے لایا  ہوں آپ  وضو  کرکے  تہجد پڑھ لیں چونکہ تہجد جیسے عظیم معمول  سے محروم ہوں اس لئے میں  حسرت  سے بولا کہ  میں ابھی صرف  فجر کی نماز اور تلاوت  کے بعد  لیہ روانہ ہو جاؤں گا مجھے مین روڈ کا  راستہ سمجھا دینا یہ سن  کر وہ  اندر  گیا اور میرے فارغ  ہونے تک دوبارہ بڑی  میز  کو ناشتہ  کے مختلف  ایٹم  سے بھر  چکا  تھا ااور  میرے  ناشتہ کرنے تک وہ  میرا ایک  سوٹ استری  کرنے  پر تلا  ہوا تھامگر  میں نے  نہیں  دیا۔  عمدہ لذیذ ناشتے کے بعد  وہ  فوراََ  اپنی  ذاتی  سواری  نکال  لایا  پھر  میرا  یہ  میزبان   جو  خود  بھی  کسی  محکمہ  میں  بڑا  افسر  ہے علیٰ الصبح اوس  پڑتی  سخت سردی  میں مین روڈ  سے  لاری  اڈا تک لیہ  جانے  والی  کسی  تیار  گاڑی  کی  تلاش  میں  اپنی  سواری  دوڑاتا  مارا مارا  پھر رہا تھا وہ میرے  لئے  بہت  ہی  دکھ  پا  رہا تھا مجھے  اس پر ترس آیا تو میں دعائیہ  انداز  میں  اس  کا شکریہ  ادا  کرتے  ہوئے بولا۔

آپ نے  مہمان نوازی  کا حق ادا کر دیا بہت  پہلے آپ  ہماری  یونیورسٹی  میں  اپنے  کسی  کام  میرے  پاس  آئے تھے  تو  آپ کی داڑھی  نہ  تھی اب  ماشااللہ داڑھی  سے کیا  بھلے  لگ رہے  ہو آپ  کی ان  اچھی  عادات کی  وجہ  سے اللہ آپ  کو حج کی سعادت  بھی بخشے  گا۔ میں نے دیکھا حج کا سن کر وہ سُن ہوگیا،  کچھ دیر تو خاموش رہا پھر  بولا ہم  حج نہیں  کر سکتے  ہم مکہ ومدینہ نہیں جا سکتے ہماری جماعت پر بہت  سخت  پابندی  ہے  ہمیں  وہاں  جاانے  سے  روک  دیا  گیا  ہے۔  آخر ایسی جماعت  آپ  کی کون  سی ہے میں سخت  حیران و ُپریشان  ہو  کر  پوچھا  تو  تھوڑی  دیر  چپ  رہ  کر  وہ  بولا  ہم  احمدی  ہیں ہماری  جماعت  قادیانی  ہے۔  میرے کانوں پر  کوئی  بڑا  ایٹم  بم  ایک دھماکے  سے  گرج  کر  میرے  دل  پر  جا  گرا۔

میں نے کہا کہ ہم محمدی ہیں  اور  اس  کی سواری  سے  اتر  کر  جلدی  سے ایک  آہستہ  آہستہ  چلتی  تونسہ  جانے  والی  ویگن  میں  جا بیٹھا  ۔۔۔  مارے  صدمے  کے  میرا  دل  بیٹھا  جا  رہا  تھا  میرا  سارا  بدن غم و غصے  سے کانپ  رہا تھا۔  میری آنکھوں میں ایک دم ایسے نمی آ گئی  جیسے  خون اتر آیا  ہو ۔۔۔ مجھ سے اللہ  اور ختم النبین ﷺ محمد الرسول اللہ کی محبت میں دشمن اسلام کو مڑ  کر  دیکھا نہ گیا اور   وہ شخص یوں کھڑے کا کھڑا رہ گیا جیسے کسی شکاری کی گرفت سے اچانک شکار نکل گیا ہو اور بے بسی سے اپنی ساری محنت پر رو دھو رہا ہو۔ یہ اللہ ہی کی مجھ پر مہربانی  تھی  کہ  جو  شخص چند  لمحوں  پہلے میرا  مہمان نواز محسن تھا۔  مگر  وہ مجھے اجنبی اجنبی سا لگ  رہا تھا جسے میں  ہم کلمہ سمجھ  رہا  تھا  وہ اپنا  نہیں غیر ہو چکا تھا۔ وین کے  ساتھ  لگا  لمبے  لمبے قدموں  سے  چلتا  شیشے  میں  سے  مجھے  اترنے  کا  کہتے  ہوئے  دیکھ  رہا  تھا اور  میں  اس کم  بخت کو اجنبیت  سے  دیکھ  رہا  تھا۔۔۔  اُس  کی  ہدایت  کے  لئے  میں  آہ  بھر  کر دعائیں  کرتا  ہوں۔  جیسے جیسے  وین  تیزی  پکڑتی  گئی  میری  آہیں  سسکیاں  تیز  ہوتی  گیئں  میں  ہر لحظہ آہیں  بھرتا  رہا  ایک  آہ  سوچ  کر  کہ اچھا  بھلا  محمد الرسول اللہ ﷺ کا  امتی تھا،  محمدی تھا اب  بے  دین  ہو  گیا۔  جہنم  میں  جلے  گا۔ اے اللہ! اسے ہدایت  عطا ہو۔  دوسری  آہ بھرتے  ہی  آنسو  تیز  ہو  جاتے  کہ میں  نے ایسے  دشمن دین  کے گھر  قیام و طعام کیا مجھے لذیذ کھانے کی  گھٹن  نے عجیب  پریشانی  دے  رکھی  تھی  اب  وہ  ناشتے  اور  ڈنر  پیٹ میں  تیزاب  کی  طرح  محسوس  ہونے  لگاجیسے  میں اللہ اور اللہ  کے رسول ختم النبین ﷺ سے  بے  وفائی کر بیٹھا ہوں۔  قنبر موڑ تونسہ  کی  وین ایک جھٹکے  سے  رکی  تو  میری ہچکی بندھ گئی کہ  مجھے  یہ دن  دیکھنا  پڑا جو منکر  ختم  نبوت ﷺ کے  گھر  کا  لذیذکھانا  پیٹ  بھر  کر  مزے  لے  لے  کر  کھایا  اللہ کو  کیا  جواب  دوں گا  کہ  کیسا  امتی    محمدﷺ ہوں  جو  احمدی  منافق کے  گھر  چلا آیا  اور  دعوتیں  اڑائیں  اچانک قرآن اکیڈمی میں انہی خاتون  کے  سوال  اور  ڈاکٹر طاہر خاکوانی  صاحب  کے  جواب  پر  میرا  قہقہ مجھے  یاد  آ  گیا ہم  ایسے  مقام  پر کچھ کھا  پی  بیٹھنے  کے  بارے  میں  اس خاتون کو  ڈاکٹر طاہر  خاکوانی  صاحب  سے  کاش  کوئی  مثبت جواب لے  لینے  دیتے اور  ہنستے ہنساتے قہقہ نا لگاتے جسے  اللہ نے  شاید نا پسند  کیا  اور  مجھے  بھی  نا  پاک ڈنر اور  ناشتہ کھلا  کر  دکھا  دیا  یہ  اور  گناہوں  سے  بڑھ  کر عظیم  گناہ تھا  یہ  بہت  بڑی  سزا  تھی  اب  میں  کسی  کی  دل  آزاری  نہیں  کروں  گا۔

  “کی  محمدؐ سے وفا تو نے تو ہم تیرے ہیں”

علامہ اقبال کا  یہ  بول  مجھے  اپنے  لیے  اللہ  کی  طرف  سے  محسوس ہوا  اور  آنسو  تیزی  سے  رواں ہو گئے اب ہچکی  کے ساتھ  مییں ہم سفر  مسافروں  کی  توجہ  یا  بے  توجہی  کو  خاطر میں  نہ لاتے  ہوئے  آواز  کے  ساتھ  رونے  لگا  تھا  میں  نے  محمدؐ سے  بے  وفائی  کی  ہے  محمدی نے لعنتی  احمدی  کے ساتھ  کھانا کھایا  ہے اللہ  نے  مجھے سزا دی  ہے  اللہ  کے  باغی کے ہاں قیام وطعام  کر بیٹھا ہوں یہ خیال  دل ودماغ  میں بار بار آ کر مجھے رونے  پر مجبور  کر رہے  تھے۔  میرا دل بھر بھر کر آ رہا تھا مجھے چین  نہیں  آ  رہا  تھا میں لیہ  پہنچنے تک  مسلسل تین  گھنٹے  جذبہ وجوش ایمانی و محبت محمدؐ میں رو  رہا  تھا  کسی پل  بھی چین  نہیں  پڑ  رہا  تھا۔  آخر  لیہ  آ  گیا  اور افسوس  کے  محمد ﷺ کی  غلامی  کا پختہ ایمان  رکھتے  ہوئے  بھی  قادیانی  مرزا  غلام احمدی  کے ہاں کھا  پی بیٹھا  تھا  میں  گاڑی  سے  اتر  کر اپنی منزل  کی  طرف رواں ضرور تھا  مگر  میرے ہاتھ  پاؤں  پھولے ہوئے تھے  ایک بڑے مجرم  کی طرح  میں ادھر ادھر گھوم رہا تھا۔ لگتا تھا  دھوپ  درخت  اور  ہر  چیز  رو  رہی  ہے  اور  مجھے  کوس  رہی  ہے  میرا  سارا  بدن ڈھیلا  ہوا جا رہا تھا میں مبالغہ  نہیں  کر رہا ۔  ابھی  بھی  اس  احمدی  کے  وہ الفاظ میرا  تعاقب  کر  رہے  تھے  جس  کے ہاں  اڑائے گلچھڑے  بندوق  کےچھرے  اور تیز لگ رہئے تھے  اللہ  کے خوف  اور صدمے  سے  میرا  سارا  بدن  کانپ  رہا  تھا میں  نے اچانک اپنے  ڈھیلے اور بے سکت ہاتھوں کی  گرفت مظبوط  کی  اور  دیکھا   تو  میرے  ہاتھ  میں  دو  سر بہ مہر سوالیہ پرچوں کے  دونوں لفا فے  بدستور محفوظ تھے اللہ  کے دین  کی  سر  بلندی  اور  اللہ  کے  پیارے  آخری نبی محمد ﷺ  پر میری جان میرے  ماں  باپ  قربان ہوں آج  جیسا  دن  میں نے  زندگی میں  کبھی  دیکھا جس میں اس قدر  خطا  سرزد  ہوئی ہو  میرے منہ  سے  بھرائی ہوئی  آواز  مییں نکلا کہ اگر اللہ اور اللہ کے  رسولؐ  کے  دشمن کے ساتھ چلتے  چلتے  موت  آ  جاتی  تو میں محمدؐ سے  محبت  کا  دعوے دار  قیامت  کے دن  اللہ  کے  ہاں  کیا  جواب  دیتا۔

اے اللہ  میری  یہ  پہلی  اور  آخری  غلطی  معاف  کر دے ۔ اے  اللہ  جو تیرا دشمن  وہ میرا  دشمن۔  اے اللہ  جو  تیرے  محمدؐ کا نہیں  وہ ہمارا نہیں  ۔ جو  محمدؐ کی  محبت  چھوڑ کر  باغی ہو  ہمارا اس  سے  کوئی  واسطہ  نہیں  کیوں  کہ۔

محمدؐ کی غلامی  دین  حق   کی  شرط اول ہے۔
گر ہو اسی  میں  خامی  تو  دین  نامکمل  ہے۔

از: راؤ عبدالقیوم (بی۔ زیڈ۔ یونیورسٹی، ملتان)۔

بصد شکریہ ۔ روزنامہ آفتاب